Our _Blog_

Our Daily News

بیڈفورڈ سے نو منتخب رکن پارلیمنٹ اور پوٹھواری کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے محمد یاسین کا تعلق میر پور سے ہے

ٹیکسی ڈرائیور محمد یاسین اپنی صاف گوئی پر بہت مشہور ہوئے

New Labour MP Mohammad Yasin vows to 'stand up' for Bedford

some image some image

بیڈفورڈ،پوٹھوارڈاٹ کوم، محمد نصیر راجہ سے۔۔۔۔۔ نو منتخب لیبر ایم پی محمد یاسین کا آبائی تعلق پیر گلی گائیاں میرپور آزادکشمیر سے ہے، وہ ایک ٹیکسی ڈرائیور ہیں۔ یہ بات ان کے قریبی دوست کونسلر راجہ وحید اکبر نے بتائی جبکہ ایک انٹرویو میں محمد یاسین ایم پی نے کہا کہ انہیں اپنے پیشے پر فخر ہے۔ راجہ وحید اکبر نے مزید کہا کہ صرف لیبر پارٹی ہی ایک ٹیکسی ڈرائیور کو پارلیمنٹ تک پہنچا سکتی ہے۔

محمد یاسین ملٹن کینز کے علاقے میں ایک پرائیویٹ ہائر ٹیکسی ڈرائیور کے طور پر کام کرتے ہیں۔ایک موقع پر جب ان کے ووٹرز نے ان سے لیبر پارٹی کے منشور کے حوالے سے سوال کیا تو انھوں نے کہا کہ ابھی تک منشور پڑھنے کا موقع نہیں ملا جس پر ان کے ووٹرز کو انتہائی شاک لگا۔

ان کے حلقہ انتخاب کے سابق ایم پی کا تعلق ٹوری پارٹی سے تھا اور محمد یاسین کو ایک کمزور امیدوار تصور کیا جارہا تھا مگر ان کی کامیابی نے سب کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا۔متخب ہونے کے بعد انھوں نے اہل علاقہ کو یقین دلایا کہ بیڈفورڈ کے عوام کی امیدوں اور وعدوں کے مطابق کام کریں گے۔

Luton; Mohammad Yasin, The ex Government boys degree college student in Mirpur as stunned everyone by winning election for the labour party. Mohammad Yasin a Bedford Borough Councillor who works as a private hire driver in Milton Keynes, prioritised healthcare, education and police funding in his campaign.

He stunned voters by confessing he had not fully read Labour's manifesto at BoS' hustings event last week, but Bunyan Sports Centre erupted into cheers as Mr Yasin was announced victor of the battle for Bedford and Kempston in the early hours of Friday morning. He pipped Mr Fuller to the post by less than 800 ballots, a total of 22, 712 votes compared to the Tories' 21,923.

"Mohammad Yasin said I would like to thank Theresa May for calling this strong and stable election. It's not strong and stable anymore is it? "I would also like to thank my former MP Richard Fuller for his services to the community." He later told: "Anything not good for Bedford and Kempston I will stand up to it."

When questioned about his plans to halt the Sustainability and Transformation Plan threatening Bedford Hospital services, Mr Yasin said he could do better than his predecessor.First up is a meeting with the chief executive of Bedford Hospital and a letter to the Department of Health.

عشرت شاہ نے مئیر آف سلاو کا حلف اٹھا لیا

Councillor Ishrat Shah takes oath to be next mayor of Slough

some image

سلاو (نمائندہ پوٹھوار ڈاٹ کام افتخار وارثی)----- سلاو میں مقیم کوٹلی کی رہائشی عشرت شاہ نے مئیر آف سلاو کا حلف اٹھا لیا- عشرت شاہ لیبر پارٹی کی طرف سے بطور کونسلر سیاست میں آئی اور پہلی بار ہی کامیاب ہوئی اس کے بعد تین بار کونسلر منتخب ہوئی- مئی 2016 میں وہ ڈپٹی میئر منتخب ہوئی تھیں-

کونسلر سے ڈپٹی مئیر اور اب مئیر آف سلاو منتخب- عشرت شاہ کا تعلق کوٹلی آزاد کشمیر تتہ پانی سے ہے- عشرت شاہ ایک ملنسار ہیں اور ان کے دل میں عوام الناس کی خدمت کا جذبہ کوٹ کوٹ کر بھرا ہوا ہے ضرورت مندوں،بے سہارا اور دوسروں کی مدد دن کو عملی سیاست میں لے آئی- عملی سیاست میں بھی سچائی اور محنت کو اپنا وطیرہ بنایا- سلاو میں مقیم کشمیری اور پاکستانی کمیونٹی کی طرف سے عشرت شاہ کو مئیر آف سلاو کا حلف اٹھانے پر مبارکباد پیش کی گئی -

Slough; Councillor Ishrat Shah has been elected Mayor of Slough, A full ceremony was held where she was appointed the new mayor of Slough, Councillor Ishrat is a Labour councillor.

The Pakistani community along with other communities have welcomed the appointment of the new Mayor, Councillor Ishrat shah is from Kotli in Azaad Kashmir.

The mayor is the first citizen of the borough and is voted in by fellow councillors at the council's annual meeting in May every year. The mayor chairs council meetings, and attends many different functions in the borough. These include representing the council:

The mayor also hosts visits to the mayor's parlour from various groups and organisations.

برطانیہ میں مقیم 30 پاکستانی نژاد اگلے ماہ ہونے والے الیکشن میں حصہ لے رہے ہیں

Thirty Pakistani-origin candidates in the run in upcoming UK elections

some image

سلاو(نمائندہ پوٹھوار ڈاٹ کام افتخار وارثی) ----برطانیہ میں آٹھ جون کو ہونے والے انتخابات میں مختلف سیاسی جماعتوں کے ٹکٹس پر تیس پاکستانی نژاد برطانوی شہری بھی اپنی قسمت آزمائی کرنے کے لیے الیکشن میں حصہ لے رہے ہیں- جن میں گیارہ خواتین بھی شامل ہیں- سیاسی جماعتوں کی طرف سے جاری کی گئی فہرست کے مطابق حزب اختلاف جماعت لیبر پارٹی نے دوسری جماعتوں کی نسبت زیادہ خواتین اور پاکستانی نژاد شہریوں کو ٹکٹ دیے ہیں -

لیبر پارٹی کی طرف سے چودہ پاکستانی نژاد برطانوی شہری انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں جبکہ لبرل ڈیموکریٹ پارٹی کی طرف سے 9 پاکستانی نژاد، کنزرویٹیو پارٹی کی طرف سے چھ پاکستانی اور سکاٹش نیشنل پارٹی نے ایک پاکستانی نژاد برطانوی شہری کو ٹکٹ دیا ہے- زیادہ تر پاکستانی نژاد برطانوی شہری لندن کے حلقوں سے انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں مختلف جماعتوں کی طرف سے سات پاکستانی نژاد برطانوی شہری میدان میں اتارے گئے ہیں -

یاد رہے کہ اس بار لیبر پارٹی نے اکتالیس فیصد نشستوں پر خواتین کو ٹکٹ جاری کیے ہیں لیبر پارٹی کی طرف سے پچاس اقلیتی امیدوار بھی انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں- حکمران جماعت کنزرویٹیو پارٹی کی طرف سے انتیس فیصد، لبرل ڈیموکریٹ پارٹی کی طرف سے تیس فیصد اور سکاٹش نیشنل پارٹی کی طرف سے تینتیس فیصد خواتین کو ٹکٹ جاری کیے گئے ہیں - ان انتخابات میں گیارہ پاکستانی نژاد برطانوی خواتین حصہ لے رہی ہیں- الیکشن کو ابھی دو ہفتے باقی ہیں تمام امیدواروں نے ڈور ٹو ڈور الیکشن مہم جاری رکھی ہوئی ہے-

As many as 30 candidates of Pakistani origin will be contesting the June 8 elections in the United Kingdom. According to lists released by different political parties, the Labour Party has given more tickets to Pakistani-origin men and women than any other party.

The Labour Party has 14 Pakistani-origin candidates to represent it in the elections. These include Shabana Mahmood, Khalid Mahmood, and Perry Barr in Birmingham, Yasmin Qureshi in Bolton, Naseem Shah and Imran Hussain in Bradford, and Rosena Allin-Khan in Tooting.

Amongst others, the Liberal Democrats have nine Pakistani-origin candidates, the ruling Conservative Party has six, while the Scottish National Party has one British-Pakistani to represent it during the election.

London has the highest number of Pakistani candidates, with seven contesting in various constituencies. Also interesting is the fact that Labour has chosen women candidates for 41 per cent of the seats. Moreover, as many as 50 members of various minority groups will also be representing the party.

لیبر پارٹی کے انتخابات دو ہزار سترہ کے منشور میں قانون زوجیت میں بڑی ترمیم متوقع

زوج کے ویزے کے لئے کم از کم آمدنی کے قانون میں ترمیم کی جائے گی

Labour party to scrap minimum income rule for foreign spouses

some image some image

لندن، نمائندہ پوٹھوار ڈاٹ کوم، مسرت عزیز۔۔۔۔۔۔۔ اس سال آنے والے انتخابات کے لئے لیبر پارٹی کے منشور کے کئی اہم نکات سامنے آئے ہیں جن میں پاکستانی خاندانوں کے لئے بہت بڑی خوش خبری متوقع ہے۔بتایا گیا ہے کہ لیبر پارٹی قانون زوجیت میں ترمیم کر کے کم از کم آمدنی کی پابندی ختم کر رہی ہے۔

پارٹی کے قبل از وقت فاش ہوئے منشور کے مطابق لیبر پارٹی خاندانی حقوق کا تحفظ چاہتی ہے اور آمدنی والے قانون کی وجہ سے صرف دولتمند افراد ہی اپنے حقوق کا تحفظ کر پاتے ہیں۔اور جو افراد ساڑھے اٹھارہ ہزار سالانہ کما نہیں پاتے وہ اپنے بنیادی انسانی حقوق سے محروم رہتے ہیں۔یعنی وہ اپنی بیوی اور بچوں کے ساتھ ایک چھت کے نیچے نہیں رہ پاتے ۔

موجودہ قانون زوجیت سنہ دوہزار دس کے متعارف کروایا گیا تھا۔جس وقت موجودہ وزیر اعظم تھریسا مے برطانیہ کی وزیر داخلہ تھیں۔اس قانون کا مقصد ٹیکس دہندگان پر سے بوجھ کم کرنا تھا۔لیبر پارٹی کے منشور کے مطابق ویزہ کی درخواست میں کام کی غرض سے برطانیہ آنے اور اپنے اہل خانہ کے ساتھ ازدواجی زندگی شروع کرنے کے قوانین میں فرق ہونا چاہئیے۔

London; Labour would scrap the controversial income threshold that separates families and stops thousands of British citizens bringing their foreign husbands and wives to the UK.

The leaked draft version of the party’s manifesto says it does not believe that “family life should be protected only for the wealthy” and that it would replace the threshold with “an obligation to survive without recourse to public funds”.

Immigration rules currently require British citizens to earn more than £18,600 before their foreign partner can join them on a spouse visa. Critics say the policy discriminates against working class people on lower incomes.

The rule was introduced by the 2010 Coalition government when Theresa May was Home Secretary. It was introduced to reduce the burden on the taxpayer. The leaked version of the party’s draft manifesto says: “We believe fair rules mean that a distinction should be made between family connections and migrant labour.

نڑالی جبیر ،گوجرخان اور رائل نواب مانچسٹر کے اونر محبوب حسین کو ایشین ویڈنگ ایوارڈز کی تقریب میں بیسٹ ایشین ویڈنگ سپلائر کا ایوارڈ

Royal Nawab founder Mahbbob Hussain of Gujar Khan awarded in Manchester

some image

مانچسٹر، نمائندہ پوٹھوار ڈاٹ کوم، محمد نصیر راجہ۔۔۔۔۔ مانچسٹر میں ہونے والے ایشین ویڈنگ ایوارڈز کی تقریب میں رائل نواب آف مانچسٹر کو بہترین ویڈنگ سپلائر کے ایوارڈ سے نوازا گیا۔ واضح رہے کہ رائل نواب آف مانچسٹر کے مالک محبوب حسین کا تعلق نڑالی جبیر، گوجرخان سے ہے۔ برطانیہ میں ہونے والی شادی بیاہ کی تقریبات کے حوالے سے رائل نواب اپنی ایک منفرد حیثیت اور مقام رکھتا ہے۔

محبوب حسین نے جس وقت مانچسٹر میں واقع ایک سینما گھر کو شادی ہال میں تبدیل کیا تو کوئی نہیں جانتا تھا کہ ایک وقت رائل نواب برطانیہ میں شادی بیاہ کے حوالے سے رائلٹی کا نشان بن جائے گا۔رائل نواب کے قیام سے لے کر اب تک ایشین شادیوں میں کئی طرح سے جدت انگیز تبدیلیاں آچکی ہیں۔ مانچسٹر کے بعد حال ہی میں رائل نواب نے لندن میں بھی بینکوئٹ ہال کا آغاز کیا۔

ایشین ویڈنگ ایوارڈز کے دیگر کامیاب اداروں اور افراد کے نام یہ ہیں۔ شادی بیاہ کے لئے بہترین جیولری سپلائرز میں سائی فیشنز، بہترین ویڈنگ کیک کے لئے کیک گیلری، بہترین ویڈنگ کیٹرر کے لئے دیسی لائونج، بہترین ویڈنگ مووی میکر ایس ایم ڈیجیٹل، ڈی جے آف دی ائیر کے لئے سول ایشیا، ویڈنگ فلارسٹ کے لئے سپرنگ بنک فلاورز،، ویڈنگ اینٹرٹینر اور میوزک کے لئے دیسی ناچ اور دیگر کو ایوارڈز دئیے گئے۔

some image some image some image

Manchester; The founder of the Nawaab Restaurant Mahboob Hussain of village Narali Jabeer, Gujar Khan in Manchester was honoured with the Outstanding Contribution accolade at the Asian Wedding Awards. Mahboob Hussain from the Royal Nawaab Manchester took a chance when he transformed an old cinema into a wedding banqueting suite. The decision has in many ways revolutionised how Asian weddings were celebrated.

The ceremony at the Mercure Manchester Piccadilly Hotel celebrated the very best of Asian wedding suppliers from wedding planners to card makers. Tributes were also paid to two of the wedding industry’s most respected professionals at the annual Asian Wedding Awards in Manchester.

Tarla Somaiya, of Payal Events, and Robert Bell, of Barkers Catering Equipment Hire, both of whom who passed away in the last 12 months, and were described on the night as trailblazers in the Asian Wedding Industry.

AWARD WINNERS Accessories & Jewellery Supplier of the Year: Sai Fashions (Jewellery), Banqueting Hall of the Year: The Sheridan, Bridal Wear Designer of the Year: Alankar Sarees Cake Company of the Year of the year: The Cake Gallery Caterer of the Year: Desi Lounge DJ of the Year: Soulasia Roadshow Filmmaker of the Year: SM Digital Weddings Florist of the Year: Springbank Flowers Finishing Touches Supplier of the Year: B Inspired Grooms Wear Designer of the Year: Sherwani King Makeup Artist of the Year: Nida Glamour World Musician & Entertainer of the Year: Desi Nach Wedding Photographer of the year: Asia Burrill Wedding Planner of the year: Payal Events, Stationery Supplier of the Year: Ya Habibi Designs Toast Master of the Year: Stephen T Sanders Transport Supplier of the Year: Rolls Royce Chauffeurs Venue & Stage Decorator of the Year: The Wedding Fairy Venue of the Year: Thornton Manor

Pothwar. COM

+44 7763249391 | pothwar@yahoo.co.uk
© Copyright Pothwar.com | Est. 2000-2016

new graphics